روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Nosheen Ali. Edited by Noor Pamiri. Recorded in Gilgit.

"Slowly, slowly" &
"Who worshipped the nation?"


Slowly, slowly, temperaments will change
and I am certain that the world will change

By the way our time burns with rebellion
it seems the thrones will fall, the crown will change

I want to be scattered like fragrance on the earth
descend like love into every heart on the earth

I am tired of this hatred, this impurity, this hostility
I wish to drink from the goblet and go beyond all limits

Do not kill me in the mosque, the streets, the seminaries,
I want to die a natural death in my house

Do not imprison me in the prison-house of religions
I want to rise like the sun from the East

“Hafeez”, in these banal, lifeless philosophies of “Being”
I want to fill the history of the living now.

****

Who worshipped the nation? And who worshipped the gods of money?
We’ve seen everyone here – the courtiers and the leaders!

And the fields where we sowed the seeds of our wishes.
We saw them stained with blood, those gardens.

Our pride is intact: Husayn’s patience is our inheritance.
So brandish your swords more, come sharpen them more!

They will drag him down at last. And he will regret it.
He who is feeding the traitors with our blood today.

And we are certain – from this earth, a millions suns will sprout.
Till when will the tyrants offer rule to the darkness?

The shade tented above our heads today, may it never become “death”
Efface the walls whose foundations are suspect.

And no messiah is near, no hope remains for salvation.
And tortured, tortured, we saw all the sick ones die.

And hungry, naked, homeless children are common in my land.
Bread, clothes, and a home, offer those to the ill-fated ones.

And even the enemies murdered, “Shakir”, are remembered
when, in solitude, we mourn our lost, beloved ones.

So who worshipped the nation? And who worshipped the gods of money?
We’ve seen everyone here – the courtiers and the leaders!

Translated by Zahir Thal

"دھیرے دھیرے" اور
"کس نے قوم کو پوجا"

دھیرے دھیرے مزاج بدلے گا
اب یقیں ہے سماج بدلے گا
وقت کی شورشوں سے لگتا ہے
تخت بدلیں گے تاج بدلے گا
میں خوشبو بن کے دنیا میں بکھرنا چاہتا ہوں
محبت بن کے ہر دل میں اترنا چاہتا ہوں
میں تنگ آیا ہوں نفرت سے، کدورت سے، عداوت سے
میں پی کر جام اب حد سے گزرنا چاہتا ہوں
مجھے مت مار دو مسجد میں سڑکوں پہ مدارس میں
میں اپنے گھر میں طبعی موت مرنا چاہتا ہوں
مجھے مت قید کر لو مذہبوں کے قید خانے میں
میں سورج بن کے مشرق سے ابھرنا چاہتا ہوں
حفیظ، ہستی کے فرسودہ و جامد فلسفوں میں
میں زندہ دور کی تاریخ بھرنا چاہتا ہوں
………

کس نے قوم کو پوجا، کس نے نوٹوں کے اوتاروں کو
ہم تو سب کو جانتے ہیں دستاروں کو، سرداروں کو
جن کی ہر اک کشت میں ہم نے اپنی چاہت بوئی تھی
خون سے رنگین ہوتے دیکھا ہم نے اُن گلزاروں کو
ہم کو ہے یہ ذعم، حسینی صبر ہمارا ورثہ ہے
اور نِکھارو اور سنوارو تم اپنی تلواروں کو
آخر اُس کو لے ڈوبیں گے وہ خود ہی پچھتائے گا
پال رہا ہے آج ہمارے خون سے جو غدّاروں کو
ہم کو یقیں ہے اِس مٹی سے لاکھ سویرے پھُوٹیں گے
ظلمت زادے آخر کب تک شہ دیں گے اندھیاروں کو
آج جو سر پر چھاؤں چھپر ہے وہ چھت کل کو موت نہ ہو
جن کی بنیادوں پر شک ہو ڈھا دو اُن دیواروں کو
کوئی مسیحا پاس نہیں ہے، باقی کوئی آس نہیں ہے
تڑپ تڑپ کر مرتے دیکھا ہم نے سب بیماروں کو
بھوکے، ننگے، بےگھر بچّے عام ہیں میری بستی میں
روٹی، کپڑا اور گھر دے دو اِن قسمت کے ماروں کو
قتل ہوئے جو دُشمن شاکر وہ بھی یاد آجاتے ہیں
روتے ہیں جب تنہائی میں ہم بھی اپنے پیاروں کو.

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *