روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Mohammad Ali Talpur. Edited by Hassan Rassool. Press 'cc' to see subtitles in Punjabi, English & Urdu.

My dear ocean, listen

My dear ocean, listen

Our sons departed to earn

They live, filling water for the mighty

The cauldrons clank

Half-asleep eyes strive to remain open

Roads palpitate

The master’s chain around their neck has become their only distinction

My dear ocean, listen

Our words are the waters of Sawan [1]

Our story lasts a step or two

Yet tells of long-standing despair

The water flows over black stones

Demanding the evidence of existence

We have no excuse

Sort, now, this half-truth of a life.

My dear ocean, listen

Translated by Nadir Ali and Mahbub Shah

[1] The Sawan/Soan is a river in the Potohar region of Pakistani Punjab.

مھاڑے متر سمندر سُن وو

شاعر: نجم حسین سید

شاعرانہ فنکار: رشم حسین سید

مھاڑے متر سمندر سُن وو

گئے لال کمائیاں کرنے

رہے ڈاڈھیاں نا پانی بھرنے

دیگاں کھڑکنیاں

اکھیں سُتیاں اَڈیاں اَڈیاں

سڑکاں دھڑکنیاں

گل گانی بگانی گُن وو

مھاڑے متر سمندر سُن وو

مھاڑے بول سوائیں نا پانی

پیر دو پیر کہانی

جھورے ازلاں نے

کالے وٹیاں پانی لنگھنا

جِند گواہی منگنا

مھاڑا عُزر نہیں

ہُن کچڑا سچڑا پُن وو

مھاڑے متر سمندر سُن وو

ਮ੍ਹਾੜੇ ਮਿੱਤਰ ਸਮੁੰਦਰ ਸੁਣਵੋ

ਮ੍ਹਾੜੇ ਮਿੱਤਰ ਸਮੁੰਦਰ ਸੁਣਵੋ

ਗਏ ਲਾਲ ਕਮਾਈਆਂ ਕਰਨੇ
ਰਹੇ ਡਾਢਿਆਂ ਦਾ ਪਾਣੀ ਭਰਨੇ
ਦੇਗਾਂ ਖੜਕਨੀਆਂ
ਅੱਖੀਂ ਸੁੱਤੀਆਂ ਅੱਡੀਆਂ ਅੱਡੀਆਂ
ਸੜਕਾਂ ਧੜਕਨੀਆਂ
ਗਲ ਗਾਨੀ ਬਿਗਾਨੀ ਘੁਣਵੋ

ਮ੍ਹਾੜੇ ਮਿੱਤਰ ਸਮੁੰਦਰ ਸੁਣਵੋ

ਮ੍ਹਾੜੇ ਬੋਲ ਸਵਾਈਂ ਨਾਂ ਪਾਣੀ
ਪਹਿਰ ਦੁਪਹਿਰ ਕਹਾਣੀ
ਝੋਰੇ ਅਜ਼ਲਾਂ ਦੇ
ਕਾਲੇ ਵੱਟਿਆਂ ਪਾਣੀ ਲੰਘਣਾ
ਜਿੰਦ ਗਵਾਹੀ ਮੰਗਣਾ
ਮ੍ਹਾੜਾ ਉਜ਼ਰ ਨਹੀਂ
ਹੁਣ ਕੱਚੜਾ ਸੱਚੜਾ ਪੁਣਵੋ

ਮ੍ਹਾੜੇ ਮਿੱਤਰ ਸਮੁੰਦਰ ਸੁਣਵੋ

میرے متر سمندر سُن رے

شاعر: نجم حسین سید

شاعرانہ فنکار: رشم حسین سید

میرے متر سمندر سُن رے

گئے لال کمائی کرنے

زور والوں کا پانی بھرنے

دیگیں کھڑک رہی ہیں

ادہ کھُلی آنکھیں کبھی جاگیں اور کبھی سونے لگتی ہيں

دھڑک دھڑک سڑکیں ہیں دھڑکیں

اب طوق غلامی انکی شناخت

متر ہمارےسُن رے

بول ہمارے جیسے سوان ندی کا پانی

پگ دو پگ کی یہ کہانی

دُکھ ازل سے اپنے ساجھے

پانی کالے پتھر پر سے گزرا جائے

اور جینے کی گواہی مانگے

پاس ہمارے کوئی بہانہ نہیں

اب سچا جھوٹا نپٹا دے

میرے متر سمندر سُن رے

ترجمہ: حسن مجتبی’

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *