روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Gulfam Khan (Press CC to view subtitles in Urdu and English)

Speak, for your lips are not free

Speak, for your lips are not free

Speak, as truth wearing chains has disappeared in the shadow of guns

Speak, your voice has been locked up

Speak, your songs are being watched

Speak, for your lips are not free

Say that speaking of Balochistan is a crime today

Say that the bullet, all five bullets are its testimony

Lodged in her young being

Speak, for your lips are not free

Mutilated bodies lie on top

Our eyes, so unsighted

The sun not seen in years

Speak, for your lips are not free

Say that your land

Is no longer yours

And the sea, shores, no longer yours

Speak, for your lips are not free

Say that reciting such a poem is no longer ‘safe’

Say that under this roof,

Film, literature, music, art

Pen and paper,

Coffee drinking,

Are improper all

Tell, Karachi, your tale

A speaking woman

An unarmed woman

Threatens power

Speak, for your lips are not free

An unarmed woman is soaked in blood

Brutality after brutality, a woman bears

Tell, when will she be free?

Say, now she’ll be free

Speak, for your lips are not free

Speak Balochistan, for now

Speak dear Pukhtoonkhwa, for now

Speak my Sindh, for now

Speak, for our lips are not free

Say that in one of the scales

Lie heavy, leaden boots

In there lie all the lies

Speak, for your lips are not free

In this deceitful world, beloved

Weigh the heavy scale of truth

Speak, for your lips are not free

Speak, for when are your lips not free

Speak, for your lips are not free

Translated by Nosheen Ali

بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول کہ لب آزاد نہیں ہیں
بول کہ سچ زنجیریں پہنے
سنگینوں کے سائے میں غائب شد ہے
بول کہ لب تیرے پر تالے
بول کہ گیتوں پر پہرے ہیں
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول بلوچستان یہ کہنا
جرم ہے ٹھہرا
بول کہ گولی اسکی گواہی
پانچوں گولی اسکی گواہی
جسم جوآں میں پیوستہ ہیں
بول کہ لب ازاد نہیں ہیں

مسخ شدہ لاشیں ہیں اُس پر
آنکھوں پر پٹی ہے کس کر
سورج دیکھے برسوں بیتے
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول کہ زمیں تیری یہ اب
تیری بھی نہیں ہے
اور سمندر ساحل بھی تیرے نہ ٹھہرے
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول نظم ایسی یہ کہنا ‘سیف’ نہیں ہے
بول کہ اپنی چھت کے نیچے
فلم کہانی گیت مصور
قلم اور کاغذ
کافی پینا ٹھیک نہیں ہے
بول کراچی تیری کہانی
کہتی لڑکی
نہتی لڑکی
سب سے خطرہ
بلوانوں کو
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

خون میں لت پت نہتی لڑکی
ظلم پہ ظلم یہ سہتی لڑکی
بول کہ کب آزاد یہ ہوگی
بول کہ اب آزاد یہ ہوگی
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول بلوچستان کہ اب کہ
پیارے پختونستان کہ اب کہ
بول میرے مہران کہ اب کے
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

بول کہ اک پلڑا ہے جس میں
بھاری بھرکم بوٹ پڑے ہیں
اس میں سارے جھوٹ پڑے ہیں
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں

جھوٹے اس سنسار میں ساجن
سچ کا بھاری پلڑا تول
بول کہ لب آزاد نہیں ہیں
بول کہ کب آزاد نہیں ہیں

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *