روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Produced by: Reema Naqvi and Mariam Paracha. Press CC to view subtitles in Urdu, English and Roman Hindi-Urdu

Dawn Carnage

Here again is the hour of dawn carnage

In the killing fields of the dark horizon

have spread again the stains of blood

Again from a tower’s height the night’s length is proclaimed

Commanded

In the branches hang the breezes with held breath

In paralysis the trees

Arrayed on branches the dead birds

On the dark screens of eyes

Plays again only one scene

O beaten soul!

O moist eye…

This dawn carnage

When was it ever a matter of astonishment

Let this scene be played over again

When spirits are recovered, when the soul gathers itself

We will raise this coffin again

Again will we wash the sun’s cindered corpse with tears

Will we kiss its blue lips, warm its frozen body

Again in the soul’s field

Will we bury the new-born infant

In the empty hands of the mad, glimmer a few rubies and diamonds

When did a thug ever manage to rob a people of its treasury of tears

Do not count so cheap the water that flows from these eyes

Every tear insists, every sigh protests – we do not accept this night

As long as our grief abides, as long as our hearts are battered

However vast grows the promise of oppression, shining is the dawn of hope.

Translated by Prashant Keshavmurthy

قتلِ سحر

پھر آئی ساعتِ قتلِ سحر

تاریک اُفق کے مقتل میں

پھر داغ لہو کے پھیل گئے

پھر اک بلند منارے سے طولِ شب کا اعلان ہوا

فرمان ہوا

دم بستہ رہے شاخوں میں صبا

سختہ میں شجر

شاخوں میں سجے مردہ طائر

آنکھوں کے اندھیرے پردوں پر

پھر ایک ہی منظر کھلنے لگا

اے جانِ زبوں!

اے دیدۂ تر۔۔۔

یہ قتلِ سحر

کب ٹھہری بات اچنبھے کی

اک بار یہ منظر اور سہی

جب جی ٹھہرے، جب جاں سنبھلے

ہم پھر یہ نعش اُٹھائیں گے

پھر مردہ سورج کا لاشہ ہم اشکوں سے نہلائیں گے

اس کے نیلے لب چومیں گے، یخ بستہ بدن گرمائیں گے

پھر عرصۂ جاں میں

طفلکِ نوزائیدہ کو دفنائیں گے

دیوانوں کے خالی کف میں کچھ لعل و جواہر روشن ہیں

کب کوئی لٹیرا چھین سکا اشکوں کا خزینہ خلقت سے

تم اتنا ارزاں مت جانو میں یہ آنکھوں کا بہتا پانی

ہر اشک مصر، ہر آہ بضد یہ رات ہمیں منظور نہیں

جب تک قائم ہے اپنا الم ، جب تک چھلنی ہے اپنا جگر

کتنی بھی بڑھے معیادِستم، تابندہ ہے اُمیدِ سحر

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *