روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Ammar Aziz. Press CC to view subtitles in English, Urdu, Hindi and Romanized Hindi-Urdu.

'Alif' Solved This Puzzle

From the known limit of the sea

To another limit

All was journey

My home was but the sea

Far away from deserts and forests, I

Was immersed in my own depths

Charting a path in the current

I took in my hand the sunbeam-filled platter

Of the rising and setting sun

And tossed it up in the air

So my God smiled

He descended to the earth

And said lovingly

It is you I have made the deserts and forests for

Rove in them and take pleasure…

Walking in these deserts and forests

Stepping on the soft sand

Gathering the sand into my fists

Whirling and dancing

I made the rising and setting sun my toy

So my God began to say to me

I made the moon and the stars

And the skies spread over these stars

All for you

Take a look at them too…

I began walking on the stars

Began altering my path

Began rubbing my face with the brightness of light

I was hard of heart and started melting

So God put his seal of witness

On the deed

Of my existence

And said confidingly

Now go play with your dreams

But take care to remember

The clay that flows through your body and soul

Is dear to me!

 

Translated by Zahra Sabri

ایہہ گل الف سجھائی

سمندر کی معلوم حد سے

کسی اور حد تک

سفر ہی سفر تھا

مرا تو سمندر میں گھر تھا

میں دشت و بیاباں سے دور

اپنی گہرائیوں میں مگن تھی

روانی میں رستہ بناتے ہوئے

ڈوبتے چڑھتے سورج کے

کرنوں بھرے تھال کو

میں نے ہاتھوں میں لے کر اچھالا

تو میرا خدا مسکرایا

اتر کر زمین پر وہ آیا

محبت سے کہنے لگا

میں نے دشت و بیاباں تمھارے لئے ہی بنائے ہیں

…تم ان میں گھومو پھرو

میں نے دشت و بیاباں میں چلتے ہوئے

ریت پر پاؤں رکھتے ہوئے

ریت سے مٹھیاں اپنی بھرتے ہوئے

رقص کرتے ہوئے

ڈوبتے چڑھتے سورج کو اپنا کھلونا بنایا

تو میرا خدا مجھ سے کہنے لگا

میں نے چاند اور ستارے

ستاروں پہ پھیلے ہوئے آسماں

سب تمہارے لئے ہی بنائے ہیں

…ان کو بھی دیکھو

میں تاروں پہ چلنے لگی

اپنا رستہ بدلنے لگی

روشنی اپنے چہرے پہ ملنے لگی

سخت جاں تھی پگھلنے لگی

تو خدا میرے ہونے کے

تصدیق نامے پہ

مُہرِ شہادت لگا کر

بہت رازداری سے کہنے لگا

جاؤ اب اپنے خوابوں سے کھیلو

مگر دھیان رکھنا

جو مٹی تمھارے رگ و پے میں بہتی ہے

!وہ مجھ کو محبوب ہے

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *