روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Ammar Aziz. Press CC to view subtitles in English, Urdu, Hindi and Romanized Hindi-Urdu.

We need a whole lot of flowers

We need a whole lot of flowers

to gather at the feet of the dead

We need a whole lot of flowers

to cover the faces of corpses in gunny-sacs

A whole annual flower show

should be preserved in Edhiís morgue

to keep at the foot of graves

dug in the police graveyard for the designated dead

A spray of flowers from the balcony in bloom

for the woman shot dead

at the bus stop

Sky-blue flowers

to tickle

the two youths lost to eternal sleep in a yellow cab

Dried flowers

to caparison

and restore a mutilated corpse

We need a whole lot of flowers

for the wounded

languishing in clinics

that neither have the Japanese rock

nor any other variety of garden

We need a whole lot of flowers

for one half of them will succumb to their wounds

We need a forest of nocturnal flowers

for those who could not sleep for the report of gunfire

we need a whole lot of flowers

for a whole lot of rueful people

we need anonymous flowers

to cloak the stripped girl

we need a whole lot of flowers

We need a whole lot of flowers

on a whole lot of dancing creepers

that we could train to screen this city

 

Translated by Musharraf Ali Farooqi

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

مارے جانے والے لوگوں کے قدموں میں رکھنے کے لیے

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

بوریوں میں پائی جانے والی لاشوں کے چہرے ڈھانکنے کے لیے

ایک پوری سالانہ پھولوں کی نمائش

ایدھی سردخانےمیں محفوظ کرلینی چاہیے

نامزد مرنے والوں کی

پولیس قبرستان میں کھدی قبروں کے پاس رکھنے کے لیے

خوبصورت بالکنی میں اگنے والے پھولوں کا ایک گچھا چاہیے

بس اسٹاپ کے سامنے

گولی لگ کر مرنے والی عورت کے لیے

آسمانی نیلے پھول چاہییں

یلو کیب میں ہمیشہ کی نیند سوئے ہوئے دو نوجوانوں کو

گدگدانے کے لیے

ہمیں خشک پھول چاہییں

مسخ کیے ہوئے جسم کو سجا کر

اصلی صورت میں لانے کے لیے

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

اُن زخمیوں کے لیے

جو اُن اسپتالوں میں پڑے ہیں

جہاں جاپانی یا کسی اَور طرح کے راک گارڈنز نہیں ہیں

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

کیونکہ ان میں سے آدھے مر جائیں گے

ہمیں رات میں کھلنے والے پھولوں کا ایک جنگل چاہیے

اُن لوگوں کے لیے

جو فائرنگ کے وجہ سے نہیں سو سکے

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

بہت سارے افسردہ لوگوں کے لیے

ہمیں گم نام پھول چاہیں

بے ستر کی گئی ایک لڑکی کو ڈھانپنے کے لیے

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

ہمیں بہت سارے پھول چاہییں

بہت ساری رقص کرتی بیلوں پر لگے

جن سے ہم اس پورے شہر کو چھپانے کی کوشش کر سکیں

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *