روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Nosheen Ali & Mohammad Ali Talpur. Edited by: Reema Naqvi. Press CC for subtitles in English, Urdu & Roman Hindi-Urdu

My soul loves

Poet: Mira Bai

Poetic Artist: Basar Bhagat

Wood burns to coal – coal to ash

O cursed I, burnt so badly – not coal nor ash remain

 

I will not marry, o my mother

My heart loves the ascetic life

My soul loves poverty

 

Wealth and feast do not suit me mother

I will eat simple dry bread, o my mother

 

My heart loves the ascetic life

My soul loves poverty

 

Kohl and bindiya do not become me

I will smear ash on my body, o my mother

 

My heart loves the ascetic life

My soul loves poverty

 

The colourful wedding scarf does not become me

I will wear the garland of the Lord’s bride, o my mother

 

My heart loves the ascetic life

My soul loves poverty

 

Mira bai sings the songs of the Lord

I sing the song of the One Supreme God, o my mother

 

My heart loves the ascetic life

My soul loves poverty

 

Translated by Nauman Naqvi

من لاگو

شاعر: میرا بائی

شاعرانہ فنکار: بسر بھگت

لکڑی جل کوئلہ بھئی، کوئلہ جل بھئی راکھ

او میں ابھاگن ایسی جلی، نہ بھئی کوئلہ نہ بھئی راکھ

 

ہوں تو نہیں جاؤں ساتھ رے او موری ماں

میرو من لاگو فقیری میں

میرو چِت لاگو غریبی میں

 

مال مٹھائی ماتا مجھ کو نہ بھاوے

میں تو لوُکھا سوُکھا ٹُکڑا کھاؤں موری ماں

 

میرو من لاگو فقیری میں

میرو چِت لاگو غریبی میں

 

کاجل ٹیِلڑی مجھ کو نہ سوبھے

میں تو انگ رے بَھبھوُت لگاؤں موری ماں

 

میرو من لاگو فقیری میں

میرو چِت لاگو غریبی میں

 

نیلا پیلا لوُگڑا مجھ کو نہ سوبھے

میں تو تُلسی کی مالا پہروں موری ماں

 

میرو من لاگو فقیری میں

میرو چِت لاگو غریبی میں

 

کہے بائی میِرا گیِریِدھر نا گُن

میں تو ایک ہری را گُن گاؤں موری ماں

 

میرو من لاگو فقیری میں

میرو چِت لاگو غریبی میں

من لگے

شاعر: میرا بائی

شاعرانہ فنکار: بسر بھگت

لکڑی جلے کوئلہ بچے، کوئلہ جلے بچے راکھ

میں ابھاگن ایسی جلی، نہ بچا کوئلہ نہ بچی راکھ

میں تو نہیں جاؤں ساتھ او میری ماں

میرا من لگے فقیری میں

میرا دل لگے غریبی میں

مال مٹھائی ماتا مجھ کو نہ بھائے

میں تو روُکھا سوُکھا ٹکرا کھاؤں میری ماں

میرا من لگے فقیری میں

میرا دل لگے غریبی میں

کاجل بندیا مجھ کو نہ جچے

میں تو راکھ بدن پر لگاؤں میری ماں

نیلا پیلا دوپٹا مجھ کو نہ زیب دے

میں تو تلسی کی مالا پہنوں او میری ماں

کہے بائی میرا کرشنا کے گُن

میں تو ایک ہری کے گُن گاؤں میری ماں

میرا من لگے فقیری میں

میرا دل لگے غریبی میں

ترجمہ : حسن مجتبیٰ

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *