روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Nosheen Ali. Edited by Mudassir Sheikh. Press 'CC' to see subtitles in Punjabi, English & Urdu.

ਖ਼ੂਨ ਪਸੀਨਾ ਸਿਆਹੀ

ਮਜ਼ਦੂਰ ਇੱਟਾਂ ਵੱਟੇ ਢੋਅ ਰਹੇ

ਰਾਜ ਚਿਣ ਰਹੇ
ਮੇਰਾ ਸਿਆਹੀ ਦੀ ਕਮਾਈ ਨਾਲ
ਮਕਾਨ ਬਣ ਰਿਹਾ ਹੌਲੀ ਹੌਲੀ

ਨਾਲ ਨਾਲ ਮੈਂ ਵੀ ਬਣ ਰਿਹਾਂ

ਬਣਕੇ ਮਕਾਨ ਬੰਦੇ ਨੂੰ ਨਵਾਂ ਜਹਾਨ ਦਿੰਦਾ
ਬਣਦਾ ਮਕਾਨ ਬੰਦੇ ਨੂੰ ਬੜਾ ਗਿਆਨ ਦਿੰਦਾ

ਸਿਆਹੀ ਦੀ ਕਮਾਈ ਨਾਲ ਬਣਦੇ ਮਕਾਨ ਨੇ
ਮੈਨੂੰ ਦੱਸਿਆ
ਕਿ ਕਿਰਾਏ ਦੇ ਮਕਾਨ ਦੀ ਕੰਧ ਵਿਚ
ਕਿੱਲ ਠੋਕਣ ਤੇ
ਮਾਲਕ ਮਕਾਨ ਦਾ ਸੀਨਾ ਕਿਓੰ ਪਾਟਦਾ ਸੀ
ਉਸ ਦਾ ਮਕਾਨ ਪਸੀਨੇ ਦੀ ਕਮਾਈ ਦਾ ਸੀ

ਮੇਰੇ ਬੱਚੇ ਦੇ ਮਾਮੂਲੀ ਸੱਟ ਲੱਗਣ ‘ਤੇ
ਪਤਨੀ ਦੀਆਂ ਅੱਖਾਂ ‘ਚੋਂ
ਪਰਲ ਪਰਲ ਅੱਥਰੂ ਵਗਦੇ
ਤਾਂ ਮੈਂ ਖਿਝਦਾ
ਕਿ ਰੋਣ ਵਾਲੀ ਕਿਹੜੀ ਗੱਲ ਹੋਈ
ਪਰ ਹੁਣ ਮੈਂ ਖਿਝਦਾ ਤਾਂ ਮੈਨੂੰ ਸਮਝਾਉਂਦਾ
ਸਿਆਹੀ ਦੀ ਕਮਾਈ ਨਾਲ ਬਣਦਾ ਮਕਾਨ
ਕਿ ਖਿਝ ਨਾ ਭਲਿਆ ਮਾਣਸਾ
ਬੱਚੇ ਮਾਵਾਂ ਦੇ ਖ਼ੂਨ ਦੀ ਕਮਾਈ ਨਾਲ ਬਣੇ ਹਨ

ਬਣਕੇ ਮਕਾਨ ਬੰਦੇ ਨੂੰ ਨਵਾਂ ਜਹਾਨ ਦਿੰਦਾ
ਬਣਦਾ ਮਕਾਨ ਬੰਦੇ ਨੂੰ ਬੜਾ ਗਿਆਨ ਦਿੰਦਾ

خون پسینہ سیاہی

مزدور اٹاں وٹے ڈھو رہے

راج چن رہے

میرا سیاہی دی کمائی نال مکان بن رہیا ہولی ہولی

نال نال میں وی بن رہیاں

بن کے مکان بندے نوں نواں جہان دیندا

بنندا مکان بندے نوں بڑا گیان دیندا

سیاہی دی کمائی نال بنندے مکان نے میں نوں دسیا

کہ کرائے دے مکان دی کندھ وچ کل ٹھوکن تے

مالک مکان دا سینہ کیوں پھاٹدا سی

اوہدا مکان پسینے دی کمائی دا سی

میرے بچے دے معمولی سٹ لگن تے

پتنی دیاں اکھاں چوں پرل پرل اتھرو ڈگدے تاں میں کھجدا

کہ روون دی کیہڑی گل ہوئی ہے

پر ہن میں کھجدا تے میں نوں سمجھ آوندا

سیاہی دی کمائی نال بنندا ایہہ مکان

کہ کھج نہ بھلیا مانڑسا

بچے ماواں دے خون دی کمائی نال بنے ہن

بن کے مکان بندے نوں نواں جہان دیندا

بنندا مکان بندے نوں بڑا گیان دیندا

Blood, Sweat and Ink

Labourers carry the bricks

Masons lay them down

With earnings from ink

Slowly, my house is being built

Alongside, I am being built as well

Once built, a house gives a new world to man

While being built, a house gives much wisdom to man

My house being built with earnings from ink

told me why

when I pushed a nail in the wall of a rented house

the owner felt such pain in the chest

His house, too, was built on earnings from sweat

When my child gets even a minor scratch

and tears pour out of my wife’s eyes

I get annoyed and ask:

What is there to cry about?

But now when I get annoyed

My house being built with earnings from ink teaches me:

Do not get annoyed naive man

Children are made from mothers’ blood

Once built, a house gives a new world to man

While being built, a house gives much wisdom to man

Translated by Jasdeep Singh

خون پسینہ سیاہی

مزدور اینٹیں اور پتھر ڈھو رہے ہیں

مستری دیوار چنتے ہیں

سیاہی کی کمائی سے میرا گھر بن رہا ہے رفتہ رفتہ

ساتھ ساتھ میں بھی بن رہا ہوں

بن کےمکان بندے کو نیا جہان دیتا ہے

بنتا ہوا مکان بندے کو بڑا گیان دیتا ہے

سیاہی کی کمائی سے بنتے اس مکان نے مجھ کو بتلایا

کہ کرائے کے گھر کی دیوار میں کیل ٹھوکنے سے

مالک مکان کا سینہ کیوں پھٹتا تھا

وہ مکان بھی اسکے خون پسینے کی کمائی کا تھا

میرے بچے کو معمولی سی چوٹ لگنے پر

بیوی کی معصوم آنکھوں میں بھرے آنسو دیکھ کر میں چڑ کر کہتا

کہ اس میں رونے کی کیا بات ہے ٹھہری

لیکن اب جب میں چڑتا ہوں تو سیاہی کی کمائی سے بنتا ہوا مکان مجھ کو سکھاتا ہے کہ چڑ مت بھولے آدمی

بچے مائوں کے خون کی کمائی سے بنے ہیں

بن کےمکان بندے کو نیا جہان دیتا ہے

بنتا ہوا مکان بندے کو بڑا گیان دیتا ہے

ترجمہ : حسن مجتبیٰ

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *