روحِ سخن
a community for poetic dialogue

Directed by: Ammar Aziz. Press CC on the video above to view subtitles in English, Urdu, Hindi & Roman Hindi-Urdu

We hear

We hear that even the jungle lives by a certain code


We hear that when the lion has eaten his fill

He does not attack

But goes and stretches out beneath the dense shade of trees

 

When strong gusts of wind make the trees shudder

The starling leaves her own children

To protect the crow’s eggs with her wings



We hear that if a young bird falls out of the nest

All the jungle wakes up from sleep

 

We hear that when in some river

The tawny shadow of the weaverbird’s nest trembles over the water’s surface

The silver fish of the river regard it as a neighbour

 

If a storm comes, or a bridge collapses

Then on a single plank of wood

The squirrel, snake, goat, and leopard all huddle together

 

We hear that even the jungle lives by a certain code

 

O Lord! O Glorious, Revered One

O Wise, Just, and Mighty One

In this city of mine

At least put into practice some code of the jungle



We hear that even the jungle lives by a certain code



Translated by Zahra Sabri

سُنا ہے

سُنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہوتا ہے

 

سُنا ہے شیر کا جب پیٹ بھر جائے

تو وہ حملہ نہیں کرتا

درختوں کی گھنی چھاؤں میں جا کر لیٹ جاتا ہے

 

ہوا کے تیز جھونکے جب درختوں کو ہلاتے ہیں

تو مینا اپنے بچّے چھوڑ کر

کوّے کے انڈوں کو پروں سے تھام لیتی ہے

 

سُنا ہے گھونسلے سے کوئی بچّہ گر پڑے تو

سارا جنگل جاگ جاتا ہے

 

سُنا ہےکسی ندی کے پانی میں

بئے کے گھونسلے کا گندمی سایہ لرزتا ہے

تو ندی کی روپہلی مچھلیاں اس کو پڑوسی مان لیتی ہیں

 

کوئی طوفان آ جائے، کوئی پُل ٹوٹ جائے

تو کسی لکڑی کے تختے پر

گلہری ، سانپ ، چیتا اور بکری ساتھ ہوتے ہیں

 

سُنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہوتا ہے

 

خداوندا، جلیل و معتبر

دانا و بینا، منصف و اکبر

میرے اس شہر میں

اب جنگلوں ہی کا کوئی دستور نافذ کر

 

سُنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہوتا ہے

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *